کورونا وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد سوا دو کروڑ  پہنچ رہی ہے۔ یورپ کے بہت سے ممالک میں رفتار کو کم ہونے کے دعوے کیے جارہے ہیں۔ لیکن اب بھی امریکہ اور برازیل جیسے ممالک میں کورونا پوزیٹیو  مریضوں کی تعداد سب سے زیادہ ہے۔ امریکہ اور برازیل کے بعد بھارت اس فہرست میں تیسرے نمبر پر ہے۔ عالمی ادارہ صحت نے کورونا وائرس کے وبا سے متعلق ایک اہم معلومات شیئر کی ہیں۔

ڈبلیو ایچ او (ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن) نے کہا ہے کہ 20 سے 50 سال کی عمر کے لوگوں نے اس وائرس کا سب سے زیادہ پھیلانے کا کام کیا ہے۔

مغربی ممالک میں کرونا وائرس کے بارے میں ، ڈبلیو ایچ او کے ریجنل ڈائریکٹر ڈاکٹر تاکیسی کسائی نے منگل کو کہا ، ‘کورونا وائرس 20 ، 30 اور 40 سال کی عمر کے لوگوں میں بہت تیزی سے پھیل رہا ہے۔ ان لوگوں میں سے زیادہ تر لوگ نہیں جانتے کہ وہ کورونا سے متاثر بھی  ہیں۔

ڈاکٹر تاکیشی کسائی نے کہا ، ‘یہ وائرس 20 سے 50 سال کی عمر کے لوگوں میں پھیل رہا ہے اور بہت سارے لوگوں کے لئے یہ انتہائی خطرناک ثابت ہورہا ہے۔ یہ وائرس بوڑھوں ، دائمی طور پر بیمار ، بھیڑ علاقوں میں رہنے والے افراد اور غیر محفوظ علاقوں میں رہنے والے لوگوں کے لئے بڑی پریشانیوں کا سبب بن سکتا ہے۔

ڈبلیو ایچ او کے ماہر نے بتایا کہ آسٹریلیا ، فلپائن اور جاپان جیسے ممالک میں ، پچاس سال سے کم عمر کے متاثرہ افراد کی تعداد میں تیزی سے اضافہ ہورہا ہے۔ ان لوگوں میں  یا تو وائرس کی بہت کم علامات دیکھی جارہی  ہیں یا انہیں کوئی علامت نہیں مل رہی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ لوگ جان بوجھ  کر ایک دوسرے تک پھیلارہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ مغربی ممالک میں کروڑوں افراد اس وبا کے ایک نئے مرحلے میں داخل ہوگئے ہیں۔ ایک ایسا مرحلہ جہاں حکومتوں کو کرونا کے بڑھتے ہوئے معاملات  سے نمٹنے کے لئے پائیدار طریقوں کے بارے میں سوچنا ہوگا۔ حکومت کو لوگوں میں صحت کی دیکھ بھال کے نظام اور صحت کی اچھی عادات کو بہتر بنانے کے لئے مستقل کوششیں کرنا ہوں گی۔

تاہم ، ڈبلیو ایچ او نے تمام ممالک کی حکومت پر زور دیا کہ وہ ماسک پہننے اور گھر سے باہر کے لوگوں کے لئے باقاعدگی سے ہاتھ دھونے جیسی چیزوں کو سنجیدگی سے لیں۔ لوگوں کو بھی گروپ میں جمع نہ ہونے کا مشورہ دیا گیا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here