نئی دہلی : جب سے ہندوستان میں کورونا کی بیماری پھیلی ہے ، لوگوں میں یہ پیغام دیا جارہا ہے کہ اگر اس بیماری کا خاتمہ کرنا ہے تو معاشرتی فاصلہ برقرار رکھنا بہت ضروری ہے۔ لیکن بہت سارے لوگ ہیں جو اس بات کو نہیں سمجھتے ہیں ۔ کورونا کے پھیلنے کے بعد دہلی میں تبلیغی جماعت کا پروگرام کا انعقاد  بھی ہوا  تھا  ۔

ملک بھر سے اور بیرون ملک سے بھی لوگ یہاں پہنچے تھے ۔ یہ لوگ کورونا انفیکشن کے دوران جمع ہوئے تھے اور اب یہ پورے ملک میں پھیل چکے ہیں۔ بتا یا یہ  جارہا ہے کہ ان میں سے بہت سے افراد کورونا سے متاثر ہوسکتے ہیں اور اب بہت ساری ریاستوں کی حکومتیں ان کی تلاش کر رہی ہیں تاکہ ایسے لوگوں کو الگ کیا جاسکے۔

کل رات 200 کے قریب افراد کو بھی دہلی کے نظام الدین علاقے میں واقع ایک مسجد سے لوکنایک اسپتال میں  الگ تھلگ وارڈ میں داخل کیا گیا ۔ بتایا یہ بھی جا رہا  ہے کہ تبلیغی جماعت کے پروگرام میں سعودی عرب سے بھی کچھ لوگ آئے تھے ، جو انفکشن ہوسکتے ہیں۔

کہا جا رہا ہے کہ 65 سالہ کشمیری بزرگ جو اس پروگرام میں شریک ہوئے تھے وہ کورونا کی وجہ سے انتقال کر گئے ہیں۔ اکنامک ٹائمز کی ایک خبر کے مطابق ، جماعت میں شامل ہونے والے زیادہ تر افراد ملیشیا  سے آئے تھے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here