دہلی کے صفدرجنگ اسپتال میں اناؤ ریپ متاثرہ کا دیررات انتقال ہوگیا ۔ متاثرہ کو لکھنؤ سے دہلی منتقل کیا گیا تھا۔اس کا جسم 95 فیصد جھلس چکا تھا۔

نئی دہلی : صفدرجنگ اسپتال کے برن اینڈ پلاسٹک سرجری ڈیپارٹمنٹ کے سربراہ ڈاکٹر شلبھ کمار نے کہا ، ‘ہماری بڑی کوششوں کے باوجود متاثرہ لڑکی  کو بچایا نہیں جاسکا۔ شام سے اس کی حالت خراب ہونے لگی۔ رات 11 بجے اسے قلبی دورہ کا سامنا کرنا پڑا۔ ہم نے علاج شروع کیا اور اسے بچانے کی پوری کوشش کی ، لیکن رات کے 11.40 بجے اس کی موت ہوگئی۔

ڈاکٹر شلبھ نے بتایا کہ فی الحال متاثرہ کی لاش کو مورچری میں بھیج دیا گیا ہے۔ اسپتال میں موجود متاثرہ بچی کی والدہ ، بہن اور بھائی کو اس کے بارے میں بتا دیا  گیا ہے۔ آپ کو بتادیں  کہ متاثرہ مرنے سے پہلے اپنے بھائی سے کہا تھا کہ میں زندہ رہنا چاہتی ہوں۔ متاثرہ نے یہ بھی کہا کہ مجرموں کو سخت ترین سزا دی جانی چاہئے۔

اس سے قبل متاثرہ کی میڈیکل رپورٹ جاری کی گئی تھی۔ اس رپورٹ کے مطابق عصمت دری کی شکار لڑکی کے جسم پر کوئی بیرونی یا اندرونی چوٹ نہیں ملی ہے ، صرف جھلسنے کے ثبوت ملے ہیں۔ اسی دوران ، یوپی کے  آئی جی (لا اینڈ آرڈر) پروین کمار نے یہ بھی کہا کہ متاثرہ شخص کو جلانے سے پہلے یا اس کے بعد چاقو یا تشدد کا کوئی ذکر نہیں ہے۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here